Home / کالم / سوشل میڈیاکے لکھاری

سوشل میڈیاکے لکھاری

سوشل میڈیا پر موجود ‘ لکھاریوں ‘ نے اپنی انجمن ستائش باہمی بنا رکھی ہے جو انگلش محاورے ‘ تُو میری کھجا، میں تیری کھجاؤں گا ‘ کے ذریں اصول پر عمل کرتے ہوئے ہر دوسرے ہفتے ایک دوسرے کی تعریفی پوسٹس لگاتے رہتے ہیں اور یوں ان کے گلشن کا کاروبار ایک دوسرے کی کھجاتے کھجاتے چلتا رہتا ہے۔

کھجائی لکھاریوں کے اس گلشن کے ایک اہم درخت جناب عامر خاکوانی صاحب نے اپنے پسندیدہ لکھاریوں کی ایک لمبی چوڑی فہرست شائع کی ہے جس میں پورے پاکستان کے لکھنے والوں کے نام شامل ہیں۔ جن جن کے نام لکھ کر ان کی کمر کھجائی گئی تھی، انہوں نے خاکوانی صاحب کی یہ پوسٹ ‘ جزاک اللہ ‘، ‘ عامر بھائی، اللہ آپ کو خوش رکھے ‘، ‘ زرہ نوازی کا شکریہ ‘ جیسے الفاظ کے ساتھ شئیر کرکے جوابی کھجائی کا کام شروع کردیا ہے۔ عنقریب وہ لوگ بھی ‘ میرے پسندیدہ لکھاری ‘ کے موضوع پر لکھیں گے اور یوں کُھجم کُھجائی کا نہ ختم ہونے والا سلسلہ جاری و ساری رہے گا۔

میں نے سوچا کہ چونکہ میری کمر تو کوئی کھجاتا نہیں، کیونکہ میں اپنے ‘ اصلی نام ‘ سے نہیں لکھتا، اور دوسری اہم وجہ یہ کہ میرے ‘ الفاظ ‘ کا چناؤ اچھا نہیں ہوتا، چنانچہ میں خود ہی اپنی کمر کھجا لوں۔

تو جناب، میرا پسندیدہ لکھاری میں یعنی بقلم خود ہوں، کیونکہ میں جو کچھ بھی لکھتا ہوں، وہ بے شک اردو ادب کے ماہر لکھاریوں کے اسلوب سے مطابقت نہ رکھتا ہو لیکن میں جو بھی لکھتا ہوں، اس میں ایک فیصد بھی جھوٹ یا منافقت کا عنصر نہیں ہوتا۔

میری ہر پوسٹ کا صرف ایک ہی مقصد ہوتا ہے اور وہ ہے پاکستان کی بہتری اور اس کے دشمنوں کی چھترول۔

میرا آئیڈیل میں خود ہوں جس نے اپنے پیج کی مشہوری کیلئے اپنے حلقہ احباب کی مدد لینے کی کوشش نہیں کی، نہ ہی انجمن ستائش باہمی جیسی ٹیکنیک کو استعمال کیا اور نہ ہی کبھی اپنے اصلی نام کو شو کر کے رعب ڈالنے کی کوشش کی۔

مجھے کبھی اس بات کی ضرورت محسوس نہیں ہوئی کہ بڑے ‘ لکھاریوں ‘ کے سامنے نمبر بنانے کیلئے ان کیلئے تعریفی پوسٹس لکھنا شروع کردوں، خوامخواہ ہی دوسروں کو سیدی ، مرشدی، استاد جی اور قبلہ محترم کے القاب سے مخاطب کرکے اپنے لئے سوفٹ کارنر پیدا کرنے کی کوشش کروں۔

اگر مجھے لگے کہ کوئی میری تعریف کرنے لگا ہے تو میری کوشش ہوتی ہے کہ میں اسے تنگ کرکے اپنے خلاف کرلوں تاکہ مجھے تنقید کی وہ تند و تیز ہوائیں میسر ہوسکیں جو مجھے اونچا اڑنے میں مدد دیتی ہیں۔

میں ہوں اپنی پسندیدہ شخصیت۔ باقی لکھاریوں کی پین دی سری!!! بقلم خود باباکوڈا

About nasirpiya

Hi, I am Nasir Piya the Owner of this Blog, Graduated in Computer Science. I love to writing the different type of informative Articles. By profession, I am a Blogger, Web Developer, Freelancer and SEO Professional.

یہ بھی دیکھیں

Baba Kodda

جعلی پولیس مقابلے۔ پرانی داستان

1985 میں وزارت اعلی سنبھالنے کے بعد نوازشریف کی پہلی ترجیح یہ تھی کہ پنجاب …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے